بسم اللہ الرحمٰن الرحیم

عشق میں تیرے کوہ غم سر پہ لیا جو ہو سو ہو
عیش‌ و نشاط زندگی چھوڑ دیا جو ہو سو ہو

عقل کے مدرسے سے ہو عشق کے مے کدہ میں آ
جام فنا و بے خودی اب تو پیا جو ہو سو ہو

لاگ کی آگ لگ اٹھی پنبہ طرح سا جل گیا
رخت و جود جان و تن کچھ نہ بچا جو ہو سو ہو

ہجر کی سب مصیبتیں عرض کیں اس کے روبرو
ناز و ادا سے مسکرا کہنے لگا جو ہو سو ہو

دنیا کے نیک و بد سے کام ہم کو نیازؔ کچھ نہیں
آپ سے جو گزر گیا پھر اسے کیا جو ہو سو
ہو

 

Mountains of agony, I bear in Your love now, come what may
The luxuries of life, I forsake now, come what may

Leave the madrassa of reason, enter the tavern of love
From chalice of annihilation and self effacement, drink now, come what may

The pangs of separation, I bared before the Beloved
With a smile of pride and elegance said Hu, “Let it be”

In the mirage of this body, one dark night after another passes by
When finally the dawn arrives, be ready to step forward, come what may!

I care not about the good or bad of this world
One who has gone beyond the self, did what he did
come what may!

~ Kalaam of Hazrat Shah Niyaz (1742-1834, A sufi saint of Delhi), translation credit: Saqib Mumtaz of Sufi Music