مجھے ہر طرف دلدار کا جلوہ نظر آتا ہے

حافظ حیدرآبادی چشتی

به ہر سو جلوه دلدار دیدم
به ہر چیزی جمال یار دیدم

مجھے ہر طرف دلدار کا جلوہ نظر آتا ہے اور ہر چیز میں یار کا جمال نظر آتا ہے

ندیدم ہیچ شی را خالی از وی
پر از وی کوچه و بازار دیدم

مجھے کوئی منظر اس سے خالی نظر نہیں آتا مجھے ہر کوچہ و بازار میں وہی نظر آتا ہے

چو خود را بنگرم دیدم ہمون است
جمال خود جمال یار دیدم

میں جب خود کو دیکھتا ہوں تو بھی وہی نظر آتا ہے مجھے اپنے جمال میں بھی جمال یار دکھتا ہے

نماز زاہدان محراب و منبر
نماز عاشقان به دار ديدم

زاہدوں کی نماز محراب و منبر ہے جبکہ عاشقوں کی نماز دار پر ادا ہوتی ہے

چو یک جرعه رسید از غیب حافظ
ہمه عقل و خرد بیکار ديدم

حافظ کو غیب سے اس مے کا جرعہ نصیب ہوا کہ اس کو عقل و خرد بیکار نظر آنے لگے​