بسم اللہ الرحمٰن الرحیم

Hazrat Ghulam Rasool Rajiki (ra) writes:

“Once, I saw in a dream that various respected Sufis are presenting their poetry in a gathering.  During this gathering, I was requested to present something as well. The following came out of mouth as a revelation (ilhami):

خبرم رسید امشب کہ نگار خواہی آمد
سرِ من فدای راہے کہ سوار خواہی آمد

Tonight there came a news that you, oh beloved, would come –
Be my head sacrificed to the road along which you will come riding!

ہمہ آہوانِ صحرا سرِ خود نہادہ بر کف
بہ امید آنکہ روزے بشکار خواہی آمد

All the gazelles of the desert have put their heads on their hands
In the hope that one day you will come to hunt them.

کششے کہ عشق دارد نہ گزاردت بدینساں
بجنازہ گر نیائی بہ مزار خواہی آمد

The pull of my love will not keep him still
If to my funeral he couldn’t make it, to my grave he’d surely come

These are probably Amir Kusroe’s poetic verse.”

Here is the complete poem:

خبرم رسید امشب کہ نگار خواہی آمد
سرِ من فدای راہے کہ سوار خواہی آمد

میرے محبوب مجھے خبر ملی ہے کہ تو آج رات کو آئے گا
میر ا سراُس راہ پر قربان جس راہ پر تو سواری کرتا آئے گا

Tonight there came a news that you, oh beloved, would come –
Be my head sacrificed to the road along which you will come riding!

بہ لبم رسیدہ جانم ،تو بیا کہ زندہ مانم
پس ازان کہ من نمانم، بہ چہ کار خواہی آمد؟

میری جان ہونٹوں پر آگئی ہے ، تو آجا کہ میں زندہ رہوں
پھر جب میں نہ رہوں گا تو کس کام کے لئے آئے گا

My soul has come on my lips (e.g. I am on the point of expiring);
Come so that I may remain alive – 
After I am no longer – for what purpose will you come?

غم و غصہ فراقت بکشم چنانکہ دانم
اگرم چو بخت روزے بہ کنار خواہی آمد

تیری جدائی کا غم اور دکھ بس میں ہی جانتا ہوں
جس دن تو پہلو میں آئے گا سب غم بھلا دوں گا

دل و جان ببرد چشمت بہ دو کعبتین و زین پس
دو جہانت داو، اگر تو بہ قمار خواہی آمد

دل و جان چھین کر لے گیئں ہیں تیر ی دو آنکھیں اپنے دانوں سے
اب دونوں جہان داو پر لگ جائیں اگر تو قمار بازی پر آئے

می تست خون خلقے و ہمی خوری دما دم
مخور این قدح کہ فردا بہ خمار خواہی آمد

تیری شراب تو عاشقوں کا خون ہے اور تو لگاتار پیتا جا رہا ہے
اس پیالے کو ترک کر دے کہ کل تو نے بھی خماری میں آجانا ہے

کششے کہ عشق دارد نہ گزاردت بدینساں
بجنازہ گر نیائی بہ مزار خواہی آمد

عشق کی کشش بے اثر نہیں ہوتی
جنازہ پر نہ سہی مزار پر تو آئے گا

The attraction of love won’t leave you unmoved;
Should you not come to my funeral, you’ll definitely come to my grave.

ہمہ آہوانِ صحرا سرِ خود نہادہ بر کف
بہ امید آنکہ روزے بشکار خواہی آمد

صحرا کے ہرن اپنے ہاتھوں میں اپنا سر اٹھا کے پھر رہے ہیں
اس امید پر کے تو کسی روز شکار کے لئے آئے گا

All the gazelles of the desert have put their heads on their hands
In the hope that one day you will come to hunt them

بہ یک آمدن ربودی دل و دین و جانِ خسرو
چہ شود اگر بدینساں دو سہ بار خواہی آمد

تیری ایک آمد پر خسرو کے دل وجان دین دنیا چلے گئے
کیا ہو گا جب اسی طرح دو تین با ر آئے گا

By coming once, you robbed Khusrau of his heart and faith and fortitude
What havoc would occur if, in this way, you would come two or three times?